حساس زہرا ہنزائی

ذرا آؤ تو مل کر دوریوں کا وار کرتے ہیں
دغا اور رنجشوں کو ختم، الفت عام کرتے ہیں

محبت اور عقیدت کے ہی پرچم گاڑ کر ہر سو
جہاں میں امن و آشتی کو نہایت عام کرتے ہیں

مذاہب اور سیاست سے ابهی کچه بے نیاز ہو کر
انوکها اک سبق انسانیت کا عام کرتے ہیں

چلو اب اپنے دکه کو بهول کر سوچیں یتیموں کا
اب آؤ ان کو اپنے گهر کے جیسا پیار دیتے ہیں

سسکتے اور بلکتے طفل اور بے آسرا مائیں
اگر مانو تو ہم ان کے بهی تهوڑا کام آتے ہیں

نہ جانے کب سے پیاسی ہیں حساس بستیاں غریبوں کی
کمر باندهو اے ہم وطنو، انهیں سیراب کرتے ہیں

حساس زہرا  ہنزائی
Advertisements

Happy Mothers Day,

Poem

My Mom
A halo that reflects a life of
wisdom, kindness, and caring.
Eyes that sparkle with pride
and show how much she believes in you.
Shoulders that have been slept on
and wept on and
carried a world or two.
Arms that never run out of hugs.
Hands that know
just when to hold on
and when to let go.
A mind filled with amazing things,
from fairy tales to family tails
and long-ago stories of you.
A smile that can jump right into your heart
and warm you faster than hot chocolate.
A heart of gold
that holds more love
than you can possibly imagine.
                                                                                                                     Contributed by Anna J